اسلام کی انقلابیت اور اسلامی تحریکیں

حضور اکرم ﷺ کی سیرت طیبہ حق و باطل کی کش مکش سے آراستہ ہے ہمارا معاشرہ درجنوں بنیادوں پر تقسیم ہے… اس میں لسانی تقسیم ہے، نسلی تقسیم ہے، صوبائی تقسیم ہے، ذات پات کی تقسیم ہے، فرقوں کی تقسیم ہے، مسلکوں کی تقسیم ہے، سول اور فوجی کی تقسیم ہے، سیاسی تقسیم ہے، امیر غریب کی تقسیم ہے، دیہی شہری کی تقسیم ہے… مگر یہ تقسیم نہ کسی کو نظر آتی ہے اور نہ کوئی اس پر بات کرتا ہے۔ اس کے برعکس سیاسی اعتبار سے یہ تقسیم بہت سی سیاسی جماعتوں اور طبقات کے لیے ایک ’’اثاثہ‘‘…

مزید پڑھئے

تخفیفِ آبادی کی مغربی سازش

تاریخی، تہذیبی اور اسلامی تناظر اسلامی جمہوریہ پاکستان کے خوب صورت قالین میں جدیدیت کے ٹاٹ کا بدصورت اور بھونڈا پیوند سب سے پہلے جنرل ایوب خان نے لگایا۔ یہ جنرل ایوب تھے جنہوں نے قرآن و سنت سے متصادم عائلی قوانین ایجاد کیے۔ جنرل ایوب ہی نے سب سے پہلے سود کو ’’حلال‘‘ کرنے کی سازش کی۔ انہی کے دور میں سب سے پہلے خاندانی منصوبہ بندی یا تخفیفِ آبادی کا نعرہ بلند ہوا۔ ان چیزوں کے سلسلے میں انہیں نظریہ سازی کے لیے ڈاکٹر فضل الرحمن فراہم ہوگئے تھے۔ ڈاکٹر فضل الرحمن مغرب زدگی کا شاہکار تھے اور…

مزید پڑھئے

استاد

نپولین نے کہا تھا: تم مجھے اچھی مائیں دو، میں تمہیں بہترین قوم دوں گا۔ ماں کی یہ اہمیت اس لیے ہے کہ انسانوں کا بچپن ماں کی گود میں بسر ہوتا ہے، اور انسان کا بچپن جیسا ہوتا ہے اس کی باقی زندگی بھی ویسی ہی ہوتی ہے۔ لیکن بچپن صرف ایک ’’اجمال‘‘ ہے۔ صرف ایک ’’امکان‘‘ ہے۔ استاد کی اہمیت یہ ہے کہ وہ اس اجمال کو ’’تفصیل‘‘ فراہم کرتا ہے، اور امکان کو ’’حقیقت‘‘ بناتا ہے۔ اس اعتبار سے دیکھا جائے تو ماں بچپن کی ’’استاد‘‘ ہے، اور استاد ایسی ’’ماں‘‘ ہے جس کا اثر پوری زندگی…

مزید پڑھئے

حکمرانوںکی تاریخ یا کرپشن کا موسمِ بہار

احتساب کا عمل محدود ہے، اور احتساب کے عمل کا محدود ہونا بجائے خود کرپشن کی ایک شکل ہے بدقسمتی سے فی زمانہ بدعنوانی یاکرپشن مال و دولت سے متعلق ہوکر رہ گئی ہے۔ لیکن اپنی اصل میں کرپشن روحانی، اخلاقی، نظریاتی، علمی، آئینی، تہذیبی، تاریخی، سیاسی، سماجی، ابلاغی، معاشی اور مالیاتی اصولوں سے انحراف یا ان کی پامالی کا دوسرا نام ہے۔ اس اعتبار سے دیکھا جائے تو پاکستان کے حکمرانوں کی تاریخ کرپشن کے دائمی موسمِ بہار کے سوا کچھ نہیں۔ پاکستان اسلام کے نام پر وجود میں آیا تھا اور پاکستان کی تخلیق کی کسی اور توجیہ…

مزید پڑھئے

قائد اعظمؒ تاریخ سے بنی ہوئی شخصیت

انسان کے سامنے کبھی کبھی ایسی عظمت آکر کھڑی ہوجاتی ہے جس کو بیان کرنے کے لیے مبالغہ ضروری ہوجاتا ہے۔ مثال کے طور پر اردو کی شعری روایت میں میر کی عظمت کو بیان کرنے کے لیے انہیں ’’خدائے سخن‘‘ کہا گیا ہے۔ یہ مبالغہ ہے مگر ایسا مبالغہ جس کے بغیر میر کی عظمت کو بیان کرنا مشکل ہے۔ عبدالرحمن بجنوری نے کہا ہے کہ ہندوستان کی الہامی کتابیں دو ہیں۔ ایک ویہ اور دوسرا دیوان غالب۔ یہ بھی مبالغہ ہے مگر ایسا مبالغہ جس کے بغیر غالب کی شاعرانہ عظمت کو بیان کرنا دشوار ہے۔ اب آپ…

مزید پڑھئے

میاں نواز شریف،ماضی، حال اور مستقبل

احتساب عدالت نے العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں جرم ثابت ہونے پر سابق وزیراعظم میاں نوازشریف کو 7 سال قید اور پونے چار ارب روپے جرمانے کی سزا سنادی۔ تاہم فلیگ شپ کیس میں میاں صاحب کو بری کردیا گیا۔ حضرت عیسیٰؑ کا قول ہے: جو تلوار کے سہارے زندہ رہے گا وہ تلوار ہی سے مارا جائے گا۔ پاکستان کی سیاست پر اس قول کا اطلاق کیا جائے تو کہا جائے گا کہ جو اسٹیبلشمنٹ کے سہارے سیاست کرے گا وہ اسٹیبلشمنٹ کے ہاتھوں مارا جائے گا۔ ذوالفقار علی بھٹو اسٹیبلشمنٹ کے ذریعے سیاست میں آئے اور بالآخر اسٹیبلشمنٹ…

مزید پڑھئے

اسلامی جمہوریہ پاکستان میں اسلام دشمنی

اسلام پاکستان کانظریہ بھی ہے، روح بھی ہے، تہذیب بھی ہے، تاریخ بھی ہے، معاشرت بھی ہے، اخلاق بھی ہے، کردار بھی ہے، سیاست بھی ہے، معیشت بھی ہے، قانون بھی ہے، ماضی بھی ہے، حال بھی ہے اور مستقبل بھی۔ اس کے باوجود پاکستان کے فوجی اور سول حکمرانوں اور پاکستان کے سیکولر اور لبرل دانش وروں اور صحافیوں نے پاکستان کی تاریخ کو اسلام دشمنی کے مناظر سے بھر دیا ہے۔ پاکستان دو قومی نظریے کی بنیاد پر وجود میں آیا، اور دو قومی نظریے کی بنیاد اسلام تھا۔ چنانچہ پاکستان میں یہ سوال اٹھنا ہی نہیں چاہیے…

مزید پڑھئے

پاکستان ٹوٹنے کی کہانی، حمود الرحمن کمیشن کی زبانی

۔16دسمبر1971ء سے پاکستان کی تاریخ ایک سوال کی قیدی ہے: پاکستان کیوں ٹوٹا؟ اس سوال کے کئی جوابات موجود ہیں۔ بدقسمتی سے ان میں سے کوئی جواب بھی معروضی یا Objective نہیں، بلکہ ہر جواب کی پشت پر کسی نہ کسی شخص، جماعت، طبقے یا ادارے کے مفادات رقص کناں ہیں۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ پاکستان ٹوٹنے کے باوجود بھی ہمیں پاکستان سے نہیں اپنے شخصی، جماعتی، طبقاتی یا اداراتی مفادات سے محبت ہے۔ ہمیں پاکستان سے محبت ہوتی تو ہم یہ جاننے کے لیے سر دھڑ کی بازی لگا چکے ہوتے کہ برصغیر کی ملّتِ اسلامیہ کی…

مزید پڑھئے

’’اکھنڈ بھارت‘‘کا کھیل؟

کرتارپور راہداری تقریب میں بھارت سے تعلقات کے بارے میں عمران خان کا ’’تشویش ناک‘‘ خطاب کیا عمران خان بھی پرویز مشرف اور نوازشریف کی راہ پر چل پڑے ہیں؟ بھارت کا اصل ایجنڈا یہ ہے کہ پاکستان کے داخلی تضادات اور سیاسی و اقتصادی کمزوریوں کے ذریعے پاکستان کو آئندہ چند برسوں میں تحلیل کردیا جائے پاکستان کے سول اور فوجی حکمرانوں کو نہ بھارت سے دوستی کرنی آئی، نہ بھارت سے دشمنی کرنی آئی۔ اصول ہے: دوستی وہ نبھاتا ہے جو اپنی انا کو دوستی پر قربان کرسکے۔ اور دشمنی وہ کرسکتا ہے جو اپنی انفرادی اور اجتماعی…

مزید پڑھئے

عمران خان کا نیا پاکستان یا “یُوٹرنستان”؟

پاکستان کے حکمرانوں کا معاملہ قدیم داستانوں کے کرداروں جیسا ہے۔ داستانوں میں اچانک شہزادہ مکھی بن کر دیوار پر جا بیٹھتا ہے اور مکھی اچانک شہزادی بن کر کھڑی ہوجاتی ہے۔ پاکستان میں جتنے جرنیلوں نے اقتدار پر قبضہ کیا، خود کو ’’نجات دہندہ‘‘ باور کرایا۔ مگر سارے نجات دہندہ بالآخر صرف آمر اور غاصب بن کر رہ گئے۔ میاں نوازشریف شہری تمدن کی علامت تھے، مگر صرف بدعنوانی اور ملک دشمنی کی علامت بن کر رہ گئے۔ بے نظیر بھٹو ’’روشن خیال‘‘ تھیں مگر وہ ’’روشن وبال‘‘ سے زیادہ کچھ ثابت نہ ہوسکیں۔ الطاف حسین ’’متوسط طبقے‘‘ کا…

مزید پڑھئے